40

خانہ کعبہ میں غلاف کعبہ کی تبدیلی کاعمل شروع کردیاگیا

خانہ کعبہ میں غلاف کعبہ کی تبدیلی کاعمل شروع کردیاگیا
مکہ مکرمہ(نیوز ڈیسک)خانہ کعبہ کوغسل دینے کااور غلاف کعبہ کی تبدیلی کا عمل شروع کردیاگیا۔کروناکے باعث مختصر افرادکی موجودگی میں تقریب کاانعقادتمام احتیاطی تدابیرکومدنظر رکھ کر کیاگیا۔آج صبح غلاف کعبہ کو حرم تک پہچادیاگیا۔غلاف کعبہ کے مختلف اجزاء کو ایک ٹرک میں رکھ کر خانہ کعبہ پہنچایاگیاتھا۔واضح رہے کہ ۱۹۵۴ء میں جب سعودی عرب میں شاہ سعود بن عبدالعزیز نے منصب اقتدارسنبھالا تو خانہ کعبہ کاغلاف مصرسے تیارکرکے حجاز لایاگیاتھا۔غلاف کعبہ پر ھدیہ من جانب صدر جمہوریہ مصر جمال عبدالناصر کے الفاظ درج تھے۔۱۹۵۹ء میں اس پر درج انتساب تبدیل کردیاگیااور پرانی عمارت کی جگہ متحدہ عرب جمہوریہ میں تیارکردہ غلاف کعبہ کے الفاظ درج کیے گئے تھے۔یہ تبدیلی جمال عبدالناصر کے دورمیں کی گئی تھی۔مصراور شام نے باہم مل کرغلاف کعبہ کی تیاری کاشرف حاصل کیا۔اپریل ۱۹۶۲ء کومصر میں تیارکردہ غلاف کعبہ جب سعودی عرب کی بندرگاہ پرپہنچا تو بہت دیرہوچکی تھی چنانچہ اس غلاف کو اسی کشتی کے ذریعے واپس مصربھیج دیاگیا۔اس وقت کے سعودی وزیر برائے امورحج واوقاف حسین عرب نے گودام میں موجود پرانے غلاف کعبہ کے مختلف اجزاء کو جوڑ کرنیا غلاف تیارکرنے کا پلان بنایا۔تفصیلات کے مطابق ۱۹۶۲ء کے سعودی فرماروا شاہ سعود بن عبدالعزیزنے ملک کے اندر ہی غلاف کعبہ کی تیاری کا حکم دیا اور اس کی ذمہ داری اپنے بھائی شاہ فیصل کوسونپی۔شاہ فیصل جوبعد میں مملکت کے بادشاہ بنے۔انہوں نے جرول کے مقام پروزارت خزانہ کی ایک عمارت کو غلاف کعبہ کے کارخانے کے طورپر استعمال کرنے کا فیصلہ کیا۔خانہ کعبہ کے غلاف کی تیاری کے لیے ہرطرح کے آلات اور سازوسامان اس عمارت میں منتقل کیے گئے۔اگست ۱۹۶۲ء کو تین ماہ کی کوشش سے مقامی سطح پرپہلاغلاف کعبہ تیارکیاگیااو رمکہ معظمہ میں تیارکردہ غلاف کعبہ کوخادم الحرفین شاہ سعود بن عبدالعزیز کی جانب سے پرخلوص ہدہ کے طورپرپیش کیاگیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں